November 24, 2020

Trend TV

Better Informed Today

خاتون اینکر کا قتل قتل گھریلو ناچاقی پرہوا:ایف آئی آر کا متن

گزشتہ روز کوئٹہ میں قتل ہونے والی صحافی وفنکارہ شاہینہ شاہین کا قتل صحافی حلقوں میں آزادی رائے صحافت پر قدغن لگانے اور صحافت پر حملےسےجوڑا جا رہا تھا۔

معاملہ اس وقت کھل کر سامنےآیاجب سوشل میڈیا پر خاتون اینکرکے قتل کی ایف آئی آر سامنے آئی جس میں یہ واضح لکھا تھا کہ خاتون کوگھریلو ناچاکی کی وجہ سے قتل کیا گیا ہے۔

معروف صحافی سلیم صافی نے پی ٹی وی بولان کی اینکر شاہینہ شاہین کے قتل پر تبصرہ کرتے ہوئے حکومت پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ “ریاست مدینہ” کے “امیرالمومنین” بالکل “ٹھیک” کہتے ہیں کہ برطانیہ میں صحافت اتنی آزاد نہیں جتنی پاکستان میں ہے۔

جبکہ اینکر عاصمہ شیرازی نے تبصرہ کرتے ہوئے ٹویٹ کیا کہ کوئی وزیراعظم کو بتائے کہ پاکستان میں صحافت واقعی آزاد ہے ۔ آج ہی ایک خاتون کو زندگی سے “آزاد “کیا گیا ہے۔

پولیس کے مطابق مقتولہ کی پانچ ماہ قبل محراب گچکی نامی شخص سے شادی ہوئی تھی جس نے گھریلو ناچاکی کی وجہ سے مقتولہ کو گھر میں قتل کیااورلاش کو زخمی حالت میں تقریباً12:30بجے ٹیچنگ ہسپتال محراب میں چھوڑ کر فرار ہو گیا۔

پولیس ملزم کی گرفتاری کے لیے چھاپے مار رہی ہے جبہ لاش کو پاسٹ مارٹم کے لیے بھی بھیج دیا گی تھا، صحافی خا تون کی موت گولی لگنے سے ہو ئی تھی