Jan 24, 2021 | 5:01 AM

Trend TV

Better Informed Today

ملک میں تعلیمی ادارے کھلے رہیں گے یا بند ہوں گے؟

ملک میں تعلیمی ادارے کھلے رہیں گے یا بند ہوں گے؟ فیصلہ آج ہو گا

لاہور: عالمی وبا کے بڑھتے کیسز کے پیش نظر ملک بھر کے تعلیمی ادارے کھلے رہیں گے یا بند ہوں گے؟ فیصلہ آج بین الصوبائی وزرائے تعلیم کے اجلاس میں ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کہتے ہیں 25 نومبر سے تعلیمی اداروں کی بندش چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چاہتے ہیں کہ اساتذہ سکول آئیں مگر بچے گھر سے رابطے میں رہ کر تعلیم حاصل کریں۔ لیکن حتمی فیصلہ مشاورت سے ہوگا۔

ادھر شفقت محمود کے بیان پر شہریوں کا کہنا ہے وہ حکومت سے ایسے فیصلے کی امید کرتے ہیں جس سے بچوں کی تعلیم میں خلل پیدا نہ ہو۔

پاکستان ایجوکیشن کونسل و سرونگ سکولز الائنس کی تعلیمی اداروں کو بند کرنے کے خلاف اہم پریس کانفرنس، عہدیداران نے حکومت سے تعلیمی اداروں کی بندش کے بجائے احتیاطی تدابیر اپنانے کا مطالبہ کر دیا ہے۔ پریس کانفرنس میں تجاویز پیش کرتے ہوئے کہا کہ این سی او سی کے فیصلے میں نظرثانی پر زور دیا ہے۔

سابق وزیر تعلیم پنجاب میاں عمران مسعود نے بھی این سی او سی کی میٹنگ میں سکولوں کو بند نہ کرنے پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ آن لائن تعلیم کا سلسلہ بچوں کے لئے موثر نہیں، اس لئے سکولوں کی بجائے دیگر اداروں کو بند کیا جائے۔

سرونگ سکولز الائنس کے صدر میاں رضا کا کہنا تھا کہ بچوں کے سکولز بند کرنے کی بجائے گھروں میں 50 سال سے زائد عمر کے افراد کو گھروں میں ہی قرنطینہ کیا جائے۔

چیئرمین قاضی نعیم انجم، جاوید تامبرا سمیت دیگر تنظیموں کے رہنماوں نے بھی پریس کانفرنس میں شرکت کی۔

خیال رہے کہ حکومت کو ڈر ہے کہ عالمی وبا بچوں کو اثر انداز کر سکتی ہے اس لیے وزیراعظم عمران خان چاہتے ہیں کہ بچوں کو اس وبا سے محفوظ رکھا جائے چاہیے اس کے لیے تعلیمی ادارے ہی بند کیوں نہ کیے جائیں۔